Slideshow Image 1
Slideshow Image 2
Slideshow Image 3
Slideshow Image 4
Slideshow Image 4
Slideshow Image 4
Slideshow Image 4
Slideshow Image 4
Slideshow Image 4

انٹلیکچوئل پراپرٹی رائٹس برانچ

جدید دنیا کو پانچ طرح سے گلوبلائزیشن کا سامنا ہے۔

  • غیر قانوی مارکیٹ
  • اسلحہ
  • منشیات
  • پیسہ
  • انسانیت
  • انٹلیکچوئل پراپرٹی

"پراپرٹی رکھنے کا حق دنیا کے ہر سیاسی، سماجی اور افتصادی نظام میں تسلیم شدہ ہے۔ پراپرٹی کی ملکیت تمام عدالتی نظاموں میں ایک بنیادی حق ہے۔ ہر ایک نظام پراپرٹی کمی مادی یا غیر مادی شفاف ملکیت کی مختلف طریقوں کی ضمانت دیتاہے"

"انٹلیکچول پراپرٹی میں شخصی ملکیت، صنعتی نمونی، انٹیگریٹنگ سرکٹ کا نمونہ رجسٹری، رجسٹرڈ نام، تجارتی معلومات روایتی معلومات، جغرافیائی نشانات، تکینیکی معلومات اور نئی مصنوعات اورمنڈیاِ کاپی کرنے کے حقوق اور اس سے متعلقہ معلومات اور صارف سے متعلق کمرشل معلومات یا کوئی متعلقہ معلومات اور صارف سے متعلق کمرشل معلومات یا کوئی متعلقہ بات کی معلومات شامل ہیں"

  • بین الاقوامی تجارتی برادری سے بہت سے اقدام کئے ہیں تاکہ پوری دنیا میں انٹلیکچول پراپرٹی کے حقوق کی خلاف ورزیوں کو کم کیا جا سکے۔
  • انٹلیکچوئل پراپرٹی کے اقدامات ورلڈ انٹلیکچول پراپرٹی آرگنائزیشن کے تحت ہیں اور انٹلیکچوئل پراپرٹی حقوق میں ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن کنوینشن بھی شامل ہے۔
  • ڈبلیو ٹی او وار معاہدہ میں انٹلیکچوئل پراپرٹی کے معاملات شامل ہیں۔جیسے کہ انٹلیکچوئل پراپرٹی حقوق (IPR)کے تجارت سے متعلق تمام پہو۔
  • انٹلیکچوئل پراپرٹی رائٹس کی خلاف ورزی پاکستان میں بیرونی سرمایہ کاروں کے لیے بہت بڑی رکاوٹ ہے۔

انٹلیکچوئل پراپرٹی آرگنائزیشن پاکستان کے اقدامات (کام)

  • انٹلیکچوئل پراپرٹی تنظیم پاکستان 8 اپریل 2005ء کو ایک خود کار تنظیم کے طور پر قائم کی گئی تھی، جو کہ کیبنٹ ڈویژن کے انتظامی کنٹرول کے تحتل بنائی گئی اور تجارتی نام رجسٹری ، مالکانہ حقوق دفتر، ڈیزائن آفس اس تنظیم کا حصہ بن گئے۔
  • انٹلیکچوئل پراپرٹی کی حفاظت اور مضبوطی کے لئے تمام حکومتنی نظاموں کے ساتھ تعاون۔
  • ملک میں تمام انٹلیکچوئل پراپرٹی دفاتر کا انتظام۔
  • انٹلیچوئل پراپرٹی حقوق کے بارے میں سمجھ پیدا کرنا۔
  • وفاقی کو انٹلیکچوئل پراپرٹی پالیسی کے بارے میں معلومات دینا
  • اس بات کو یقینی بنانا کہ انٹلیکچوئل پراپرٹی کے حقوق کی تعمیل صرف عہدہ دار برائے تعمیل انٹلیکچوئل پراپرٹی حقوق جیسے، پولیس ، ایف آئی اے ، پاکستان کسٹمز ہی ہو۔

انٹلیکچوئل پراپرٹی حقوق کے مقدمات کی متعلقہ عدالتوں کے نام

آئی پی آر مقدمات کی عدالتوں میں متعلقہ اضلاع کے حقوق جج(مرکزی) سینئر سول جج، سول جج، جوڈیشنل مجسٹریٹ اور علاقہ مجسٹریٹ شامل ہیں۔

حکومتی اقدامات

حکومتِ پاکستان ترجیحاً آئی پی آر، جرائم پر قابو پا کر علاقائی صنعتوں کو ترقی دینا چاہتی ہے۔

پہلے قدم کے طور پر آئی پی او پاکستان قانونIPR 2005کے تحت بنائی گئی۔

قانون حق ملکیت 1962ء ایف آئی اے کے شیڈول میں رکھا گیا ہے۔

آئی پی آر قوانین کا اطلاق لازم ہے۔

اطلاقی (ACE)،مشاورتی کمیٹی کا پانچواں اجلاس ۔WIPO

نومبر 2009-02-04میں جینوا، سوئزرلینڈ میں اطلاقی مشاورتی کمیٹی کا پانچواں اجلاس میں یہ جائزہ لینے کےلئے ہوا کہ اطلاقی فیلڈ میں WIPOکی کیا کاروائی ہے؟

اس کمیٹی میں عرفان ندیم صاحب، ایڈیشنل ڈآئریکٹر جنرل، افتصادی جرائم ونگ، ایف آئی اے اور سید علی اسد گیلانی ، پاکستان کے اول سیکریٹری اقوام متحدہ، مشن جینوا، پاکستان کی نمائندگی کر رہے ہیں اے سی ای (ACE)؟؟؟؟؟کے پانچویں اجلاس کا ایجنڈہ میں WIPOکی کاروائی کا جائزہ لینا تھا۔

آئی پی آر (IPR)اطلاق میں جعلسازی اور پرائیوسی پر قابو پانے کےلئے گلوبل کانگرس بھی شامل ہیں۔

اس اجلاس کے پہلے دن پاکستان نے ایک نظر یاتی ڈاکومینٹ جس کا عنوان Creating an enabling environment for building respect for intellectual property تھا، جس کو بے حد سراہا گیا۔

4 اگست 2009ء ،ایف آئی اے ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد میں ایف آئی اے کا آئی پی آر اطلاق پر مشاوارتی اجلاس

ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے ، طارق کھوسہ صاحب نے 4اگست 2009ء کو ایف آئی اے ہیڈ کوارٹر میں مشاوراتی کمیٹی سے خطاب کرتے ہوئے، اجاگر کیا کہ موجودہ آئی پی آر قوانین کو پاکستان میں بہتر طور پر آئی پی آر اطلاق کے لئے مناسب اقدامات کی ضرورت ہے۔

شرکاء میں شامل تھے۔

  • ڈائریکٹر جنرل ، آئی پی او (IPO)، پاکستان خالد محمود بخاری صاحب۔ امینہ سید ، آکسفورڈ یونیورسٹی پریس، معین قمر، ایڈوکیٹ، عرفان صاحب نوید احمد آفتاب پاکستان ٹؤبیکو، محمد ڈسیق کسٹم کلیکٹر ،ایڈیشنل ڈآئریکٹر جنرل عرفان ندیم افتصادی کرائم ونگ اور دوسرے سینئر افسران۔
  • ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے نے مشاورتی کمیٹی کے ارکان کی قابلِ قدر شرکت کو بہت سراہا، اور مزید کہا کہ ایف آئی اے اور آئی پی او، پاکستان کے درمیان شرکات داری کی بہت اہمیت ہے۔ اُنہوں نے مزید اضافہ کیا کہ ایف آئی اے، اپنے تمام سٹیک ہولڈرز (حصہ داری) کو آئی پی آر خلاف ورزیوں سے لڑنے کےلئے اکٹھا کرے گی۔ شرکائ کو مزید آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ ایف آئی اے ، سرمایہ کاروں نگران افسران ، سٹیک ہولڈرز (حصہ داروں) کے ہمراہ تربیتی کورسز کے اجرائ کا منصوبہ بنا رہی ہے۔ کیونکہ آئی پی آر کی آج کی دنیا میں بہت اہمیت ہے۔
  • ڈائریکٹر ایف آئی اے، شاہد ندیم بلوچ نے پریزینٹیشن دی جس میں پہلے اجلاس کی کاردگردگی اور ایجنڈہ کی تصدیق کا جائزہ پیش کیا۔ مشاورتی کمیٹی کے اجلاس کے پہلے حصہ میں ایک کمیٹی تشکیل دی گئی جس نے دوران اجلاس اپنی سیکشن بنائی۔ جس میں اگاہی مہم، آئی پی آر قوانین اور ڈیٹا بیس ڈویلپمنٹ شامل ہیں۔ یہ پیش کشن / تجویز شرکائ کی طرف سے بہت سراہی گئی۔
  • ایک بڑا فیصلہ جو اس اجلاس کے دوران کیا گیا وہ یہ تھا کہ پہلے بڑی مچھلیوں کے خلاف بہت جلد مہم چلائی جائے۔

اثر انگیز اطلاق، آئی پی آر قوانین کی ضروریات

  • ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے ظفر اللہ خان نے اس بات پر زور دیا کہ گلوبل اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے اثر انگیز اطلاق آئی پی آر قوانین کی بہت اہمیت ہے۔
  • ایف آئی اے ہیڈ کوارٹر میں منعقد مشاورتی اطلاقی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ شر کاء میں ، ڈائریکٹر جنرل آئی پی او پاکستان، خالد محمود بخاری، امینہ سید ، مینیجنگ ڈائریکٹر آکسفورڈ یونیورسٹی پریس سلمان صدیق ، مائیکروسافٹ کارپوریشن مینجیر، پاکستان، معین قمر سینئر ایڈوکیٹ ، سپریم کورٹ آف پاکستان، نوید آفتاب احمد، ڈائریکٹر پاکستان ٹوبیکو ، محمد صڈیق کسٹم کلیکٹر۔عرفان ندیم، ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل، معاشی جرائم ونگ، ایف آئی اے، شاہد ندیم بلوچ، ڈائریکٹر آئی پی آر، ایف آئی اے اور دوسرے سینئر ایف آئی افسران شامل تھے۔
  • جبکہ ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے نے بے حد قابل ماہرارکان کی قابل قدر شرکت کو سراہا اور یہ یقین دلایا کہ منظم جرائم کے خلاف لڑنے میں ایف آئی اے کا اہم کردار رہے گا۔ ڈائریکٹر جنرل، آئی پی او نے اپنی تقریری بحث ڈی جی ایف آئی اے ۔ ای پی او کو خوش آمدید کہا اور آئی پی آر پاکستان اور دوسرے ممبران کی جانب سےپوری مدد کا یقین دلایا۔
  • اجلاس کے دوران تجویز شدہ آئی پی آر قانون میں ترمیم کی نظر صانی کی گئی اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ اور اجلاس کیا جائے جس میں ترامیم کو حتمی شکل دی جائے، جو گلوبل ضرورت کے مطابق جامع اور مناسب ہو، موثر قانون کو لاگو کرنے کے لئے۔ آئی پی آر کے متعلق شکایت بات سے باخبر رکھنے کے لئے خاکہ بھی بنایا گیا۔
  • اجلاس میں اس بات کا فیصلہ کیا گیا کہ آگاہی مہم کے طو پر 12 اپریل 2010ءکو انٹلیکچوئل پراپرٹی کا دن منایا جائے ، جس میں قابل قدر لوگوں، پیشہ ور ذہین اور میڈیا (پرنٹ ، الیکٹرونک) کو دعوت دی جائے گی۔ مائیکروسافٹ پاکستان کی جانب سے آگاہی مہم کا افتتاح کیا گیا اور فیصلہ کیا گیا کہ اس قسم کی مہم مشاورتی کمیٹی کے تمام ارکان باری باری مہینہ وار کروائیں گے۔
  • غیر لائسنس شدہ سافٹ وئیر کی مہم میں آئی پی اور ایف آئی اے کے زیر بحث آئی۔
  • کل لاہور میں پڑنے والے چھاپہ کو ارکان مشاورتی کمیٹی نے بہت سراہا ، جہاں ہزاروں نقلی کتب اور ان کا چھاپہ خانہ ایف آئی اے نے بند کردیا۔ یہ ایف آئی اے کی بڑی کامیابی اور نقل خوروں کو بڑی دھمکی ہے۔

متعلقہ قوانین آئی پی آر

  • Copyright Ordinance, 1962 (On FIA Schedule) Download
  • Registered Design Ordinance, 2000 (not on the Schedule of FIA)
  • Registered Layout-Design of Integrated Circuit Ordinance, 2000 (not on the schedule of FIA)
  • Patent Ordinance, 2000 (not on the Schedule of FIA)
  • Trademark Ordinance,2001 (not on the schedule of FIA)
  • مورخہ 10 مئ 2017

    چار انسانی اسمگلر گرفتار    مزید پڑھیں

  • مورخہ 09 مئ 2017

    بلیک لسٹ ہونے پرمسافرزیر حراست    مزید پڑھیں

  • مورخہ 02 مئ 2017

    بغیر ویزہ پاکستان آنے والاچینی باشندہ ڈیپورٹ    مزید پڑھیں

  • مورخہ 01 مئ 2017

    ایف آۂئ اے نے تین اشتہاری انسانی سمگلرگرفتارکرلۓچارچل بسے    مزید پڑھیں

  • مورخہ 12 اپریل 2017

    یونان سے29 پاکستانی ڈیپورٹ    مزید پڑھیں

  • مورخہ 11 اپریل 2017

    انسانی سمگلر گرفتار    مزید پڑھیں

  • مورخہ 06 اپریل 2017

    زیتون کے پودے لگانے کے سکینڈل کے ملزم کا ریمانڈ    مزید پڑھیں

لیگل

وفاقی تحقیقاتی ادارہ © تمام حقوق محفوظ ہیں۔

DESIGNED BY: NR3C

Privacy Policy

Site Map

رہنمائی اور آرا

ادارے کے بارے میں عمومی سوالات

پتہ : ایف آئی اے ہیڈ کوارٹرز، جی 9/4، اسلام آباد پاکستان۔

ہیلپ لائن:786-345-111

ای میل: complaints@fia.gov.pk